Nahi Kinara Pyar ka











{March 30, 2010}  



{March 30, 2010}  



{March 30, 2010}  



{March 30, 2010}  



{March 30, 2010}  



{March 30, 2010}  



{March 30, 2010}  



{March 29, 2010}  

کوئی ہجر میرے وصال سے ہے بندھا ہوا

کہ یہ سلسلہ مہ و سال سے ہے بندھا ہوا


تیرا کل بھی ہو گا میری وفاؤں کی قید میں

تیرا ماضی بھی ہے میرے حال سے ہے بندھا ہوا


میری جیت بھی کسی ہار سے ہے جڑی ہوئی

سو عرو ج میر ا زوال سے ہے بندھا ہوا


تیرے خد و خال کی نزاکتوں سے خبر ہوئی

کہ تو آپ اپنی مثال سے ہے بندھا ہوا


میرا دل بھی ہے تیری چاہتوں کے حصار میں

میرا عشق بھی تیری شال سے ہے بندھا ہوا


وہ غرو ر کرتی ہے کتنا اپنے جمال پر

کہ شکاری اپنے ہی جال سے ہے بندھا ہوا


مجھے بے سبب تو پکارتی نہیں نیند میں

تیرا خواب میرے خیال سے ہے بندھا ہوا



اعجاز توکّل



{March 29, 2010}  

Wo mujhe us waqt mila

Jab paharon per barf pighal rahi thi

Cherry k darakhton per awaleen shagoofey phoot rahe they

No-khaiz khushbu se sara bagh roshan tha

Bulbul ne bus abhi chehkana shuru kia tha

Apne bazu’on mein liye wo mujhe phoolon bhari wadi mein

Ghoomta raha

Hum titliyan or jugnu pakarte rahe

Barish aik pyari dost ki tarah

Humara hath bata’ti rahi


Jis din darakht se pehla pata gira

Mein usey uthane k liye jhuki

Palat ker dekha

To wo ja chuka tha!

Ab mein toote hueye paton mein

Apne aansoo jama ker rahi hun

Mujhe jaan lena chahye tha

K us ka or mera sath

Mosam-e-bahar tak hai……………….



{March 28, 2010}  



et cetera